ایک فتویٰ چاہئے کہ اگر کسی مرد کی خوبصورت بیوی ہو تو کیا اس کی موجودگی میں دوسرا نکاح جائز ہے؟

Ager kisi mard ki khubsurati bivi ho to kia

حضرت جنید بغدادی ؒکے پاس ایک عورت آئی اور پوچھا کہ حضرت آپ سے ایک فتویٰ چاہئے کہ اگر کسی مرد کی ایک خوبصورت بیوی ہو تو کیا اس کی موجودگی میں دوسرا نکاح جائز ہے؟ حضرت جنید بغدادی نے فرمایا بیٹی اسلام نے مرد کو چار نکاح کی اجازت دی ہے۔ بشرطیکہ چاروں کے بیچ انصاف کر سکے۔ تو اُس پر اس عورت نے غرور سے کہا کہ حضرت اگر شریعت میں میرا حسن دکھانا جائز ہوتاتو میں آپ کو اپنا حسن دکھاتی اور آپ مجھے دیکھ کر کہتے کہ جس کی اتنی خوبصورت بیوی ہو اسے دوسری عورت کی کیا ضرورت؟؟ اس پر حضرت جنید بغدادی نے چیخ ماری اور بیہوش ہو گئے۔ جب وہ عورت چلی گئی تو حضرت جنید بغدادی ہوش میں آئے تو مریدین نے وجد کی وجہ پوچھی تو حضرت جنید بغدادی نے فرمایا کہ جب عورت مجھے یہ آخری الفاظ کہہ رہی تھی تو الله تعالیٰ نے میرے دل میں یہ الفاظ القا کیے کہ اے جنید! اگر شریعت میں میرا حسن دیکھنا جائز ہوتا تو میں ساری دنیا کو اپنا جلوہ کرواتا۔ تو لوگ بے اختیار کہہ اٹھتے کہ جس کا اتنا خوبصورت الله ہو اسے کسی اور کی کیا ضرورت ہے سبحان اللہ۔

Leave a Comment