حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے حالاتِ زندگی

Hazrat umer K halaty zindagi

ابتدائی حالات
حضرت عمررضی اللہ عنہا کا اسم گرامی عمر. والد کا نام خطاب آپ مجھے تعالیٰ عنہا کی کنیت ابو حفص اور لقب فاروق ہے .آپ رضی اللہ عنہ کا سلسلہ نسب آٹھویں پشت میں رسول صلی اللہ علیہ وسلم سے مل جاتا ہے. آپ رضی اللہ عنہ ہجرت مدینہ سے تقریبا 40 سال پہلے مکہ مکرمہ میں پیدا ہوئے.
حضرت عمررضی اللہ عنہا لمبے قد طاقتور اور جری و بہادر شخصیت کے حامل تھے. آپ سے تعالی عنہا 10 of مزاج مگر بااصول انسان تھے. آپ رضی اللہ عنہاکا اپنے قبیلہ میں بہت دبدبہ تھا .عرب کے رواج کے مطابق آپ رضی تعالی عنہ نئے پہلوانی اور گھڑسواری سیکھیں . خطابت میں نام پیدا کیا .آپ رضی اللہ عنہا کا پیشہ تجارت تھا۔قبول اسلام:آپ رضی اللہ تعالی عنہ نے شروع شروع میں اسلام کی مخالفت کی حضرت عمررضی اللہ عنہا کی جرات بہادری اور دوسری صلاحیتوں کی وجہ سے رسول کریمصلی اللہ علیہ وسلم نے اللہ تعالی سے آپ رضی اللہ عنہ کے مسلمان ہونے کی دعا کی۔ اللہ تعالی نے یہ دعا قبول فرمائی اور آپ رضی اللہ عنہ نبوت کے چھٹے سال اسلام لے آئے اس وقت چالیس آدمی مسلمان ہو چکے تھےخدمات:حضرت عمر رضی اللہ عنہ کے اسلام لانے سے پہلے مسلمان شکر اللہ تعالی کی عبادت کرتے تھے. آپ رضی اللہ عنہ مسلمان ہوئے تو آپ رضی اللہ عنہا کے ساتھ دیگر مسلمانوں نے خانہ کعبہ میں علانیہ کی نماز اداکی۔ اسی لیے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے آپ رضی اللہ عنہ کو فاروق کا لقب عطا کیا۔ جس کے معنی ہیں حق و باطل میں فرق کرنے والا .جب اکثر مسلمانوں نے کفار مکہ کے شر سے محفوظ رہنے کے لیے مدینہ منورہ کی طرف چھپ کر ہجرت کی۔اعلانیہ ہجرت
۔ حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ نے اعلانیہ ہجرت کی مگر کسی میں آپ رضی اللہ تعالی عنہ کو روکنے کی ہمت نہ ہوئی
مدنی زندگی میں حضرت عمر رضی اللہ عنہ ہمیشہ رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ رہے آپ سے ہی انہوں نے اسلام کے لئے بہت زیادہ قربانیاں دیں ۔رسول صلی اللہ علیہ وسلم کو آپ رضی اللہ عنہ پر بہت اعتماد تھا ۔رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے آپ رضی اللہ عنہا کو کئی مرتبہ اسلامی فوج کا سپہ سالار مقرر ۔کیا ۔فتح مکہ کے موقع پر رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے مردوں سے خود اور عورتوں سے بیعت لینے کے لیے حضرت عمر رضی اللہ عنہا کو مقرر کیاذاتی کردار:۔حضرت عمر رضی اللہ عنہ بے پناہ صلاحیتوں کے مالک تھے۔ رسول صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے آپ رضی اللہ عنہا کو بہت زیادہ محبت تھیآپ نے تعالیٰ عنہ نے انتہائی سادہ زندگی بسر کی حلیفہ ہونے کے باوجود آپ رضی اللہ عنہ کے کپڑوں پر پیوند لگے ہوتے تھے۔ آپ رضی اللہ عنہ پر ہر وقت ۔اللہ تعالی کا خوف چھایا رہتا تھا ۔ آپ رضی اللہ عنہا اپنی ضرورت پر دوسروں کی ضرورت کو ترجیح دیتے تھے

Leave a Comment