نبی ﷺ کا فر مان سن لیں۔ جو لوگ افطاری میں تر بوز کا پانی پیتے ہیں۔

Nabii ﷺ ka ferman sun lain

اللہ تعالیٰ نے اپنی نعمتوں میں بے شمار قسم کے راز چھپائے ہیں اور قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ ارشاد فر ما تے ہیں کہ تم اپنے رب کی کون کون سی نعمتوں کو جھٹلا ؤ گے ! یہ انسان پر منحصر کر تا ہے کہ وہ اللہ کی نعمتوں کا کس طرح سے فائدہ اٹھا تا ہے ا ور اللہ کی بارگاہ میں حاضر ہو کر کس طرح سے شکر ادا کر کے اللہ کی خوش نودی حاصل کر تا ہے۔

اللہ تعالیٰ شکر ادا کرنے والوں کو بے حد پسند کر تا ہے اور ان پر اپنی نعمتوں کے دروازے اور زیادہ کھول دیتا ہے آج ہم آپ کو اللہ تعالیٰ کے ایک ایسی ہی نعمت کے بارے میں بتا ئیں گے جو تربوز ہے جو موسمِ گرما میں ہمیں کھانے کو ملتا ہے اور تربوز کافی زیادہ فوائد رکھتا ہے طبی ما ہرین بھی آج اس چیز کو مانتے ہوئے دکھائی دے رہے ہیں ۔

جو ہمارے پیارے نبیﷺ نے آج سے چودہ سو سا ل پہلے ہی بیان کر دئیے تھے ایک حدیث ہے جو تربوز کے بارے میں وہ آپ سب کے لیے جا ننا بے حد ضروری ہے جو آج ہم آپ کو بتانے والے ہیں اس لیے ان باتوں کو لازمی سنیے گا ۔ یہاں پر ہم آپ کو یہ بھی بتائیں کہ نبی اکرم ﷺ کو تربوز بے حد زیادہ پسند تھا اور آپ ﷺ کسی چیز کو پسند فر ما تے تھے تو یقینی طور پر اس میں کچھ حکمت موجود ہو تی تھی کچھ فوائد موجود ہو تے تھے۔

اسی طرح آپ ﷺ تربوز کو کافی شوق سے کھا یا کر تے تھے ایک فرما ن بھی ہے تربوز کے بارے میں وہ جان کر آپ کو معلوم ہو جا ئے گا کہ نبی ﷺو تربوز کھانے کو کیوں پسند فر ما یا کر تے تھے ۔موسم گرما کا پھل ہے اور یہ بہت ہی کم عرصے کے لیے آتا ہےاس میں پانی کی مقدار جو ہے کافی زیادہ ہو تی ہے ہمارے لیے فائدہ مند ہے ہماری جلد کے لیے فائدہ مند ہے۔

اب آپ کو نبی اکرم ﷺ کا وہ بیان بتا تے ہیں جو حضرت عائشہ ؓ کہتی ہیں کہ آپ ﷺ تازہ کھجوروں کے ساتھ تربوز کھاتے اور فر ما یا کر تے ہم اس تربوز کی ٹھنڈ ک کے ذریعے اس کھجور کی گر مائش اور اس کی گرمائش کے ذریعے اس کی ٹھنڈک کے اثر کو ختم کر رہے ہیں یعنی کہ اس میں معلوم ہو گا۔

کہ آپ ﷺ تازہ کھجور کے ساتھ تربوز کھاتے تھے اور جیسا کہ ہم سب لوگ جانتے ہیں کہ ایک کھجور کے اندر شفاء ہے لیکن اس کی تاثیر دیکھی جا ئے تو وہ گرم ہو تی ہے جب کہ تربوز کی بات کی جا ئے تو ا سکی تاثیر ٹھنڈی ہو تی ہے اور اسی لیے آپ ﷺ نے ان دونوں کو ساتھ کھا یا اور کہا کہ ان دونوں چیزوں کے بہت ہی زیادہ فوائد ہیں۔

Leave a Comment