افطاری کے وقت کی جانے والی 3 بڑی غلطیاں

Aftarii k Waqt ki jany walii 3 Barii Ghaltiyan

اگر چہ یہ روایت عام ہے کہ رمضان بھوک اور پیاس کا مہینہ ہے مگر روایت کے برخلات اِس مبارک مہینے کی آمد کے ساتھ ہی لوگ اِس فکر میں پریشانی کا شکار ہوجاتے ہیں کہ 30 روزوں میں آخر سحر اور افطار کا انتظام کس طرح کیا جائے اور اِس کو بہتر سے بہتر بنانے کے لیے مسلسل تگ و دو میں رہتے ہیں۔ اور پھر بدپرہیزی کا ایسا دور شروع ہوتا ہے۔

جو یکم رمضان سے جو شروع ہوتا ہے اُس کا اختتام مہینے کے آخر میں ہی ہوتا ہے۔ جس کا نتیجہ بیماری اور پریشانی کی صورت میں نکلتا ہے۔ اِسی حوالے سے کچھ گزارشات اور مشورے ہیں کہ ہم اپنے سحر اور افطار میں کونسی غلطیاں کرتے ہیں جن میں پرہیز کرنےسے صحت کو ہونے والے خطرات سے یقینی طور پر بچا جاسکتا ہے۔اگرآپ روزانہ لال شربت پی کرافطاری کرتے ہیں توایسا با لکل مت کیجئے گا۔

ورنہ صحت کو نقصان پہنچنے کا شدید اندیشہ ہے۔ہمیں روزہ رکھنے کے ساتھ ساتھ اپنی صحت کا بھی خیال رکھنا چاہیے کیوں کہ روزہ رکھنے کے لیے اچھی صحت کا ہونا ضروری ہے۔عموماً زیادہ تر لوگ افطاری کے وقت پیاس کی شدت کی وجہ سے شربت کا زیادہ استعمال کرلیتے ہیں اور خصوصی طور پر لال شربت کو فوقیت دی جاتی ہے کیونکہ عام طور پر یہی تصور ہے کہ اِس شربت میں نقصان کا عنصر انتہائی کم ہے۔

اور بس دیکھتے ہی دیکھتے 3 سے چار گلاس ہڑپ کر جاتے ہیں جوصحت کے لیے انتہائی مضر ہے، کیوں کہ اس میں چینی اور شربت کو میٹھا رکھنے والے عوامل سے جیسے مرض میں مبتلاہونے کے خطرات بڑھ سکتے ہیں،لیکن اگر آپ واقع اِس قسم کے شربت سے چھٹکارے کو ناممکن سمجھتے ہیں تو ہفتے میں دوسےتین دن استعمال کیا جاسکتا ہے مگر شرط یہی ہے کہ ہوش اور جذبات کو قابو میں رکھیں۔اگر آپ افطاری کے فوراًبعد پانی سے اپنا پیٹ بھر لیتے ہیں ۔

تو اس اسے آپ کا پیٹ سخت ہوجائے گا جس سے آپ کو مشکالات سے دوچار ہونا پڑسکتا ہے،آپ کو افطاری کے وقت ہوش مندی سے کام لیتے ہوئے صرف پانی کے چند گھونٹ پینے چاہیے اور پھر ضرورت پڑنےپر 2 گھنٹے کے بعد وقفے وقفے سے پانی پیا جاسکتا ہے۔چند نوجوان افطاری کے فوراً بعد باڈی بلڈنگ کلب کا رخ کرتے ہے۔

مگر یہ بھی انسانی صحت کے لیے کسی خطرے سے کم نہیں ہے جس کی بنیادی وجہ یہ ہے کہ افطاری کے بعد ہماری جسم میں خون کا بھاو بڑھ جاتا اس لیے اس وقت آپ کا ورزش کرنا انتہائی نقصادن دہ ہوسکتا ہے۔جو لوگ بھی وزرش کے خواہشمند ہیں اُن کو چاہیے کہ کم از کم افطاری کرنے کے 2 گھنٹے بعدجب آپ کا کھا یا ہواسب کچھ ہضم ہوجائے تو اس کے بعد کسی بھی قسم کی ورزش کرنے میں کوئی دقت نہیں ہوگی۔

اگر رمضان میں آپ کا وزن دن بہ دن کم ہوتا جارہا ہے تو اس میں پریشان ہونے کی ضرورت نہیں۔کیوں کہ ہم بتا رہے ہیں اس کا بہت ہی آسان حل اگر افطاری کے بعد کھانا کھانے کے لئے اپنا منہ تیزی سے چلاتے ہوئے اچھی طرح چھبا چھبا کر کھانا کھا یا جائے تو اس سے آپ کا وزن برقرار رہے گا۔اگر آپ تراویح پڑھتے ہوئے اونگتے ہیں اور جسم میں سستی چڑہ جاتی ہے تواس مسئلےسے چٹکا رہ پانا ممکن بھی ہے اور ضروری ہے ۔

بس اِس کے لیے ضروری ہے کہ کھانا کھانے کےبعد میٹھا کھانے سے گریز کریں، ویسے یہ کا م تو شوگرکے مریضوں کےلیے آسان ہے کیوں کہ وہ تورمضان تو کیا عید کے دن بھی میٹھا کھانے سے گریز کرتےہیں۔اگر آپ کو دن بھر پیاس زیادہ لگتی ہے تو سحری میں چارلی انکل بن جائے ۔سحری میں کیلے کھانے سے آپ کو دن بھر پیاس کی شدت سےچٹکارہ مل سکتا ہے،اگر یقین نہیں آتا تو آزما لیں کیوں کہ آزمایش شرط ہے۔

اس کے علاوہ سحری میں دودھ، کدو، خشک آڑو، مٹروغیرہ کا استعمال بھی مفید ہے۔لیکن اگر آپکو دن بھر پیاس بھوک اور سینے کی جلن رہتی ہے تو آپ کو بالخصوص بریانی، کباب، پیزا، فاسٹ فوڈ، حلیم اور چیز جیسے لوازمات سے مکمل پرہیز کرنی چاہیے تاکہ آپ کا روزہ خوشی خوشی اپنے اختتام کو پہنچ سکے۔

بس جاتے جاتے ایک اور مشورہ دینا چاہتا ہوں کہ سحری کے وقت آلو، چاول، کھجوراور کیلے کا استعمال یقینی طور پر آپ کے پورے دن کے لیے مفید ثابت ہوسکتا ہے۔ جبکہ پانی کا زیادہ استعمال بھی کارآمد ہوسکتا ہے بس احتیاط یہ کیجیے گا کہ پانی کی مقدار اِس قدر زیادہ نہ ہوجائے کہ دوران روزہ وہ آپ کے منہ سے باہر آجائے۔اللہ ہم سب کا حامی وناصر ہو۔آمین

Leave a Comment