افطاری کرکے سو نہ جانا بلکہ سونے سے پہلے یہ سب وظیفوں کا سردار وظیفہ پڑھو جو حضور ؐ نے خود بتایا جو مانگو اللہ دے گا

Aftari ker k soo na jana

رسول خدا حضرت محمد مصطفی ٰ ﷺ اس کے کتاب جو ان کے پروردگار کی طرف سے نازل ہوئی ایمان رکھتے ہیں۔ اور مومن بھی سب خدا پر اور اس کے فرشتوں اور اس کی کتابوں اور اس کے پیغمبروں پر ایمان رکھتے ہیں۔ کہتے ہیں کہ ہم اس پیغمبروں میں سے کسی میں سے کچھ فرق نہیں کرتے ۔اور وہ خدا سے عرض کرتے ہیں ہم نے تیرا حکم سنا اور قبول کیا۔ اے پروردگار ! ہم تیری بخشش مانگتے ہیں۔ اور تیری ہی طرف ہی لوٹ کر جانا ہے۔

خدا کسی شخص کو اس کی طاقت سے زیادہ تکلیف نہیں دیتا۔ اچھے کام کرے گا تو اس کو اس کا فائدہ ملے ۔ اگر برا کرے گا تو اسے نقصا ن پہنچے گا۔ اگر پررودگار ہم سے بھول ہوگئی ہے تو ہم سے مواخذہ نہ کیجیے۔ ہم پر ایسا بوجھ نہ ڈالیو جیسا کہ ہم سے پہلے لوگوں پر ڈالا تھا۔ اے پروردگار! جتنا بوجھ اٹھانے ہم میں طاقت نہیں ۔ اتنا ہمارے سر پر نہ رکھیو۔ اور اے پروردگار ! ہمارے گن اہوں سے درگزر کر۔

اور ہمیں بخش دے ۔ اور ہم پر رحم فرما۔ تو ہی ہمارا مولا ہے۔ تو ہی ہمارا مالک ہے ۔ اور ہم کو کافروں پر غالب فرما۔ یہ سورت البقرہ کی آخری دو آیا ت ہیں۔ اور ان کی بے شما ر فضیلت ہے۔ صیحح بخاری میں ہے جو شخص ان دونوں آیتوں کو رات کو پڑھ لے۔ اسے یہ دونوں کافی ہیں۔ مسند احمد میں ہے حضور اکرم ﷺ نے فرمایا: سورت بقرہ کی آخری آیات عرش کے خزانے سے عطا کی گئی ہے۔ اور مجھ سے پہلے کسی نبی کو نہیں دی گئی ہے۔ مسلم شریف میں ہے جب نبی کریمﷺ کو معراج کرائی گئی اور آپ ﷺ سدرۃ المنتہی تک پہنچے تو ساتویں آسمان میں جو چیز آسمان کی طرف چڑھتی ہے۔

وہ یہی تک ہی پہنچتی ہے۔ اور یہاں سے لے کر جائے جاتی ہے۔ جو چیز اوپر سے نازل ہوتی ہے وہ بھی یہی تک پہنچتی ہے۔ وہاں نبی کریم ﷺ کو تین چیزیں دی گئیں۔ پانچ وقت کی نماز، سورت بقرہ کے اختتام کی آیتیں اور توحید والوں کے گن اہوں کی بخشش۔ رسول اللہ ﷺ کی ذات اقد س اللہ تعالیٰ سے یہ انعام اپنے تمام مسلمانوں کے لیے لے کر حاضر ہوئے ہیں ۔ جو لوگ ان دو آیات کو پڑھیں گے ۔ا نشاءاللہ !اللہ کی ذات ان پر اپنا فضل وکر م عطافرمائے گا۔ سورت البقر ہ کی آخری تین آیات دو رکعات نفل میں پڑھنے کا طریقہ یہ ہے کہ پہلے رکعت میں دو آیتیں پڑھی جائیں ۔

اور دوسری رکعت میں آخری آیت پڑھی جائے ۔کیونکہ آخری آیت نسبتاً طویل ہے۔ سورت بقرہ اللہ تعالیٰ کی ذات میں ایسی سورت مسلمانوں کے لیے نازل فرمائی ہے جس کو پڑھ کر اللہ کی ذات کی بڑائی بیان کرنے کا جی چاہتا ہے اور انسان کو پتہ چلتا ہے کہ اللہ تعالیٰ کی ذات کتنی عظیم اور کتنی کریم ذات ہے اور اگر کوئی شخص سورت البقرہ کی ان آیا ت بغور جائزہ لے تو آپ کو نظر آئے گا کہ ان دوآیات کے اندر باقاعدہ اللہ تعالیٰ کی ذات نے مسلمانوں کو ایک ایسی جو نعمت عطافرمادی ہے۔ ایسی دعا عطافرماد ی ہے۔ جس کو اگر آپ لوگ پڑھنا شروع کردیں۔ پھر اس دعا کی فضیلت سے اللہ کی ذات آپ پر بے شمار کرم کردے گی۔

Leave a Comment