نبیﷺ نے فرمایا ٹھنڈا پانی پینے سے کیا ہوتا ہے

Nabii ﷺ ny fermaya thanda panii peeny sy kaha hota hai

آج کے انٹرنیٹ کے دور میں ایسی باتیں دیکھنے کو ملتی ہیں کہ لوگ انکو بلاکسی تحقیق کے سچ مان لیتے ہیں اور اس پر تحقیق کرنا بھی گوارا نہیں کرتے ۔ کہا جاتا ہے کہ گرم پانی پینے کے بہت سے فوائد ہیں اور چائنہ کے اندر لوگ کھانے کیساتھ بھی گرم پانی کا استعمال کرتے ہیں ۔آج ٹھنڈے پانی کے فوائد بتانے والے ہیں جسے سن کر آپ یقینی طور پر حیران رہ جائیں گے ۔ سائنس کہتی ہے کہ ٹھنڈا پانی نہیں پینا چاہیے ۔حضرت ابو ہریرہ ؓ سے روایت ہے کہ ایک مرتبہ حضوراقدس ﷺ اپنے گھر سے نکلے ۔

حضرت ابو بکرصدیق ؓ بھی آپﷺ کے پاس تشریف لے آئے پھر آپﷺ نے پوچھا کہ کیسے آئے ہوانہوں نے کہا کہ آپ ﷺ سے ملاقات کیلئے آیاہوں آپﷺ کی زیارت کرنے کیلئے حاضر ہوا ہوں ۔ کچھ ہی دیر بعد حضرت عمر ؓ بھی آگئے وہ بھی نبی اکرمﷺ کے پاس بیٹھ گئے نبی اکرمﷺ نے فرمایا کہ مجھے محسوس ہورہی ہے آپﷺ ابو حسن کے گھر چلے گئے وہاں بکریاں اور کھجور کے درخت ہوا کرتے تھے ۔

ان کا کوئی ملازم نہ تھا ۔وہ اپنے گھر میں موجود نہیں تھے ۔ ان کی بیوی سے پوچھا آخر و ہ کہاں ہیں توانہوں نے بتایا کہ وہ میٹھا پانی لینے گئے ہیں اتنی دیر میں وہ واپس آگئے اور نبی اکرمﷺ اور صحابہ کرام ؓ کو وہاں دیکھ کر ان سے چمٹ گئے اور پیارے حبیبﷺ کو اپنے ساتھ باغات میں لے گئے اور ان کے سامنے کھجوریں رکھ دیں ۔ میٹھا پانی رکھ دیا نبی اکرمﷺ نے فرمایا اس ذات کی قسم جس کے قبضہ قدرت میں میری جان ہے ۔یہ ٹھنڈا سایہ تازہ کھجور ہے اور ٹھنڈا پانی ایسی نعمتیں ہیں کہ قیامت کے دن ان کے متعلق تم لوگوں سے پوچھا جائیگا ۔

ایک دوسری روایت میں ہے کہ حضرت ابو ہریرہ ؓ نے مروی کیا کہ قیامت کے دن انسان سے نعمتیں میں سب سے پہلے ٹھنڈے پانی کے حوالے سے پوچھا جائیگا کہ کیا ہم نے تیرے جسم کو تندرستی عطاء کی تھی اور تجھ کو ٹھنڈے پانی سے سیراب نہیں کیا تھا ۔ اسی طرح سے امام مسلم ؒ نے اپنے شاگردوں کو تلقین کی کہ وہ ٹھنڈا پانی پیا کریں ان ساری روایت سے بات پتہ چلتی ہے کہ حضوراکرمﷺ ٹھنڈے پانی کو بہت زیادہ پسند کرتے تھے ۔آج سائنس جو بھی تحقیقات کرے کہ ہم نے ٹھنڈا پانی نہیں پینا چاہیے ۔مگر ہمارے پیارے نبی ﷺ مٹکے میں ٹھنڈا پانی کرکے استعمال کیا کرتے تھے ۔

Leave a Comment