سنہری حروف کچھ نیکیاں ایسی بھی ہونی چاہیے جن کا اللہ کے سوا کوئی گواہ نہ ہو

Sunhari haroof kuch naikiyan aisi bhi honi chahiye

خدا کو نہیں چاہیے تیرے ماتھے پر محراب اے انسان بس اس کی مخلوق کا خیال کر۔ گناہ کے دوران مو ت نہ آنا اور گناہ کے بعد ت وبہ کی مہلت ملنا اللہ تعالیٰ کا بڑا احسان ہے ۔ زندگی کی تلخیوں نے ایک ہی سبق سکھایا کہ رحمت خدا وندی سے ناامید مت ہونا۔ جب تمہیں گناہ کے بعد ندامت ہوتو سمجھ لو کے اللہ نہیں چاہتا کہ تم اس راہ پر جا۔ جب اللہ کا ذکر لوگوں کی بے لوث خدمت اور اللہ کی عبادت تمہیں سکون دینے لگے تو سمجھ جائیں اللہ آپ سے راضی ہے۔

نور حاصل کرنےکے لیے انسان کو خود ایک بار جلنا پڑتا ہے۔ ذکر جس کا ہے سورت فاتحہ میں وہ صرا ط مستقیم آپ ﷺ ہی تو ہیں۔ خدا نے نماز میں بھی “سجدہ سہو” رکھا ہے اور لوگ ایک غلطی بھی مع اف نہیں کرتے ۔ میں گمان کر و بھی تو کس چیز کا یہ تو سانس بھی دی ہوئی اس خدا کی ہے۔ مشکل وقت میں ہمیشہ دعامانگا کرو کیونکہ جہاں انسان کا حوصلہ ختم ہوجاتا ہے وہاں سے رحمت خداوندی شروع ہوجاتی ہے۔ اللہ آپ کو ہمیشہ اپنی رحمتوں کے سائے میں رکھیں۔ کچھ نیکیاں ایسی بھی ہونی چاہیے۔

جن کا اللہ کے سوا کوئی گواہ نہ ہو۔ جب بھی کوئی معافی مانگے تو اسے اس امید پر معاف کردو کہ میرا اللہ بھی قیامت کے دن مجھے اسی طرح معاف فرمائے گا۔ زندگی کےتپتے صحرا میں حضور اکرم ﷺ کا ذکر جنت کی ہوا کی طرح ہے۔ ممکن اور ناممکن تو انسان کی سوچ ہے ۔ اللہ تعالیٰ کے لیے کچھ بھی ناممکن نہیں ۔ اس لیے ہمیشہ دعاکرتے رہو کہ کون جانے آپ کی دعا کب قبول ہوجائیں۔ وہ عطا کرے تو شکر اس کا وہ نہ دے تو ملال نہیں میرے رب کے فیصلے کمال ہیں۔ ان فیصلوں میں زوال نہیں ۔

Leave a Comment