حاسدین کی پہچان ۔حسد کا علاج اور حسد کو محبت میں تبدیل کرنے کا نسخہ۔

Hasedeen ki phchan,

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم۔۔۔
السلام علیکم ،امیدہےآپ خیریت سے ہوں گےاورہماری دعابھی ہےکہ اللہ کریم،آپ کوسدا عافیت کے سائے میں رکھے۔ ناظرین کرام۔۔۔’’حسد ایسا زہر ہے جسے لوگ پیتے خود ہیں لیکن اس سے مرنے کی امید دوسروں کی کرتے ہیں‘‘ آج کل تو لوگ حسد میں آکر دوسروں کو ناقابل تلافی نقصان پہنچاتے ہیں‘ لوگ اپنے محسن و ممنون کو بھی معاف نہیں کرتے۔ اگر کوئی شخص اپنے ماحول، پڑوسی، ساتھ کام کرنے والوں، دوست، احباب، رشتہ داروں سے تنگ ہو اور وہ اسے ستاتے اور پریشان کرتے ہوں تو اس کیلئے حسد کا علاج اور حسد کو محبت میں تبدیل کرنے کا نسخہ بتاؤں گا

عزیز خواتین وحضرات ہمارے پڑوس میں کچھ لوگ رہتے ہیں ایک بھائی جوانی میں بجلی کے کرنٹ سے جاں بحق ہوگئے تھے ان کے بچے یتیم ہوگئے تھے پھر ماں نے دوسری شادی کرلی‘ یہ لڑکے مزدوری کی تلاش میں بڑے شہر چلے گئے اور وہاں محنت مزدوری کرتے رہے‘ آج اس شہر میں ان کا اپنا ٹھیک ٹھاک کاروبار ہے۔ انہوں نے چند سال پہلے اپنے چند غریب رشتہ داروں کو بھی اپنے ہاں ملازمت دی اور انہیں بھی یہ کام سکھانا شروع کردیا۔

یہ غریب رشتہ دار ان کے ساتھ کام کرتے رہے‘ کام کرتے ہوئے دولت کی ریل پیل خوب دیکھی اور ان کے دل میں حسد پیدا ہوگیا کہ یہ لوگ اتنے آگے نکل گئے اور ہم ان کے ہاں مزدوری کررہے ہیں‘ ان غریب رشتہ داروں نے ایک مرتبہ ان صاحب کو اپنے ہاں کھانے کی دعوت دی اورکھانے میں انہیں ایسی چیزیں کھلادیں جس کے ذریعےان پر جادو کیا گیا تھا‘ انہوں نے بتایا کہ جونہی میں نے کھانے کے دو نوالے لیے مجھے یوں لگا جیسے میں نے دہکتی ہوئی آگ اپنے اندر اتار لی ہو میرے اندر آگ لگ گئی تو میں نے ایک دم اپنے سامنے رکھا ہوا شربت کا گلاس اٹھالیا جب اس کو پیا تو یوں لگا جیسے میں تیزاب پی رہا ہوں‘ گلاس کے پیندے میں رنگین دھاگے پڑے ہوئے تھے۔

انہوں نے کہا کہ ساری رات میں تڑپتا رہا اور پھر چند دنوں بعد مجھے ان دیکھی مخلوق سے مار پڑنے لگی‘ میں آیۃ الکرسی پڑھتا‘ قرآنی آیات‘ مسنون دعائیں پڑھتا تو اور زیادہ مارتے‘ مجھے ایسے لگتا کہ جیسے میرا سارا جسم چورا چورا ہوگیا ہو‘ میری دکان کے اندر لوہے کی بڑی بڑی چیزیں پڑی ہوئیں تھیں وہ مجھے ان چیزوں سے مارتے‘ ایک دن انہوں نے مجھے اتنا مارا مجھے لگا آج یہ لوگ مجھے جان سے مار دیں گے‘ تو میں وہاں سے بھاگا‘ میں آگے آگے اور یہ چیزیں میرے پیچھے پیچھے‘ لوگ مجھے حیرت سے دیکھتے اس کو کیا ہوگیا یہ کیوں پاگلوں کی طرح بھاگ رہا ہے؟

میں روتا ہوا‘ اللہ سے مدد مانگتا ہوا‘ بھاگتا رہا تو قریب ہی ایک جامع مسجد میں پہنچ گیا‘ وہاں موجود قاری صاحب نے میری حالت دیکھی اور مجھے ان دیکھی مخلوق سے پٹتا دیکھ کر مجھ پر قرآنی آیات پڑھ پڑھ کر پھونکنا شروع کردیا‘ مگر میری حالت نہ سدھری‘ اور تکلیف مزید بڑھ گئی۔ بالا آخر میں دوسرے شہر گیا‘ وہاں موجود ایک اللہ والے نےیہ عمل بتایا اور پھر مجھے اس عمل سے ان چیزوں سے نجات مل گئی۔

اب میں صحت مند ہورہا ہوں۔ حالانکہ ساری دنیا کہتی تھی کہ تجھ پر جو عمل ہوا ہے وہ تیری بھیانک موت کے بعد ہی ختم ہوگا۔ مگر اللہ نے مجھے اس عمل سے صحت دی اور بہترین صحت دے دی ہے‘ میرا کاروبار پھر سے چمک اٹھا ہے‘ وہ حاسدین آج بھی دربدر کے دھکے کھارہے ہیں۔ ان کا کوئی پرسان حال نہیں۔ دوستو میں نے خود بھی یہ مجرب عمل آزمایاہے، میں اپنے قریبی رشتہ داروں میں ہی موجود چند حاسدین سے انتہائی پریشان تھا‘ وہ مجھے ہرطرح سے نقصان پہنچا کر خوش ہوتے‘انہوں نے مختلف طرح کے جادو ٹونے اور تعویذات کروا کر ہمیں خوب تنگ کیا اور ہمیں دیکھ دیکھ کر زیرلب مسکراتے۔

میں نے بھی حسد سے بچنے کیلئے یہی وظیفہ پڑھا۔ ابھی دو دن ہی پڑھا کہ آدھی رات کو کمرے کا دروازہ کمرے کے اندر سے ہی اتنی زور دار شدت سے بجا اور ساتھ عجیب قسم کی آوازیں آنا شروع ہوگئی‘ ہم سب گھر والے جاگ گئے اور یہ سلسلہ رات تین بجے تک جاری رہا۔ پھر اچانک خاموشی چھائی اور اس دن کے بعد ہمارے گھر میں سکون ہے۔اس وظیفہ کا طریقہ کار یہ ہے کہ پیر والے دن شروع کریں باوضو ہو کر بستر پر لیٹ جائیں اور گیارہ بار درود پاک پڑھیں اور 300 بار یا فتاح یا علیم پڑھ کر دعا کریں

اور اس کے بعد دائیں کروٹ لیٹ جائیں یہ عمل سات دن تک کرنا ہے روزانہ رات کو یہ عمل کرکے سونا ہے اور صبح سارا دن غور کرنا ہے لوگوں پر جس جس کے پاس بھی لال رنگ کا کپڑا نظر آئے وہ ہی آ پکا دشمن ہے۔حسد اور کینہ انسان کو ایک دوسرے کا بلاوجہ بھی دشمن بنا دیتا ہے ۔اگر کوئی خواہ مخواہ دشمن بن جائے تو اس ظالم کی دشمنی سے بچنے کےلئے بھی آپ یہی عمل کرسکتے ہیں، اسی طرح ہمیں ایک شخص نے لکھا کہ مجھے حسد کی بیماری ہے، اپنے بھائی پر میرا دل جلتا ہے کہ اس کی ترقی کیوں ہورہی ہے اور میری کیوں نہیں ہورہی؟؟؟لہذا دل جل رہا ہے، ہر وقت پریشان ہے۔

میں نے اسے حسد کا جو علاج بتایاکہ جس بات پر تمہیں جلن ہے مثلا: ایک ڈاکٹر کے پاس روزانہ پچاس مریض آتے ہیں اور تمہارے یہاں دس آرہے ہیں، تمہیں جلن ہورہی ہے تو تم یہ دعا کرو کہ اے اللہ! اس کے پاس مریض اوربڑھادے، اسکا مطب اور چمکادے یہ جس کو دوا دے سب کو شفا ہوجائے، اس کے ہاتھ میں شفا رکھ دے، اسکی دنیا بھی بنادے اور دین بھی بنادے۔ تو اس کے لئے دعا کرو کیوں کہ حسد ہم پیشہ پر ہوتا ہے،

مولوی مولوی پر حسد کرتا ہے ڈاکٹر ڈاکٹر پر، انجنیئر انجنیئر پر، تاجر تاجرپر، کسی ڈاکٹر کو مولوی پر حسد نہیں ہوگا لہذا حضرت نے لکھا کہ اس کے لئے دعا کرو کہ اے اللہ! اسکی نعمت میں اور ترقی دے کیوں کہ حسد میں یہ دل چاہتا ہے کہ اس کی نعمت زائل ہوجائے، کسی کی نعمت زائل ہونے کی تمنا کی بیماری حسد ہے۔۔۔حسد کا دوسرا علاج یہ ہے کہ کبھی کبھی اس کو ایک پیالی چائے پلادو، یہ علاج بڑا کڑوا ہے، جیسے ڈاکٹر شوگر والوں کو کریلے کا پانی پینا بتاتے ہیں۔

تو جس پر حسد ہے اس کو کبھی ایک پیالی چائے پلادو، کڑوی دوا تو ہے لیکن اگر اللہ کو راضی کرنا ہے تو یہی کڑوی دوا میٹھی لگے گی، اللہ کے لئے جان کی بازی لگاو۔۔۔اپنی مجلس میں اسکی خوبیاں بیان کرو کہ ماشاءاللہ اچھے آدمی ہیں نمازی ہیں، اس میں کوئی نہ کوئی خوبی تو ہوگی تو اسکی خوبی بیان کرو۔۔۔۔۔کبھی بھی اسکی غیبت نہ کرو، اسکی برائی نہ کرو اللہ تعالی سے دعا گو رہو۔۔۔۔۔

جب سفر پر جاو جیسے حج کرنا ہے عمرہ کرنا ہے یا کہیں بھی جانا ہے تو اس سے مصافحہ اور دعا کی گزارش کرکے جاو۔۔۔۔۔جب سفر سے واپس آو تو اس کے لئے کوئی ہدیہ لے آو چاہے ایک رومال ہی لے آو ایک رومال چند روپے میں مل جائے گا تو اسے رومال پیش کردیا کہ آپ کے لئے لاھور سے رومال لایا ہوں غرض کوئی ہدیہ لے جاو۔۔۔!!یہ چند نسخوں پر جب اس نے عمل کیا تو ہمیں لکھا کہ اب جلن کم ہوگئی ہے،

اس کے بعد پھر لکھا کہ حضرت! اب تو جلن کے بجائے دل میں ان کی محبت معلوم ہوتی ہے اب تو ان کو دیکھ کر جی خوش ہوجاتا ہے، پہلے ان کو دیکھ کر الرجی ہوتی تھی، اب دیکھ کر انرجی آتی ہے، طاقت آتی ہے، خوشی پیدا ہوتی ہے ورنہ پہلے اس کا سامنا کرنے میں تکلیف ہوتی تھی۔۔۔ناظرین کرام آپ بھی اگر ان مسائل کا شکار ہیں تو ہمارے ان نسخوں پر عمل کرکے فوائد سے ہمیں آگاہ کر سکتےہیں

Leave a Comment