رسو ل اللہ ﷺ نے فر مایا ایک بار ایک شخص نے یہ کلمہ کہا: فرشتے گھبرا گئے کہ ا س ۔۔۔۔!

Rasool Allah ﷺ ny fermaya

حضرت عبدا للہ بن عمر رضی اللہ عنہ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے ان سے بیا ن کیا کہ اللہ کے بندوں میں سے ایک بندے نے یوں کہا: “یا رب، لک الحمد کما ینبغی لجلال وجھک دلعظیم سلطانک”۔ اے میرے رب ! میں تیری ایسی تعریف کرتا ہوں۔ جو تیری ذات کے جلال اور تیری سلطنت کی عظمت کے لائق ہے ، تو یہ کلمہ ان دونوں فرشتوں (یعنی کراماً کاتبین ) پر مشک ہوا، اور وہ نہیں سمجھ سکے کہ اس کلمے کو کس طرح لکھیں ، آخر وہ دونوں آسمان کی طرف چڑھے اور عرض کیا:اے ہمارے رب ! تیرے بندے نے ایک ایسا کلمہ کہا ہے جسے ہم نہیں جانتے کیسے لکھیں، اللہ تعالیٰ نے فرمایامیرے بندے نےکیا کہا؟

حالانکہ اس کے بندے نے جو کہا اسے وہ خوب جانتا ہے ، ان فرشتوں نے عرض کیا: تیرے بند ے نے یہ کلمہ کہا ہے: “یا رب، لک الحمد کما ینبغی لجلال وجھک دلعظیم سلطانک”، تب اللہ تعالیٰ نے فرمایا: اس کلمہ کو (ان ہی لفظوں کے ساتھ نامہ اعمال میں ) اس طرح لکھ دو۔ جس طرح میرے بندے نے کہا: یہاں تک کہ جب میرا بندہ مجھ سے ملے گا تو میں اس وقت اس کو اس کا بدلہ دوں گا۔

حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ آنحضرت ﷺ سے میں نے سوال کیا یارسول اللہ! قیامت کے دن آپؐ کی شفاعت کا سب سے زیادہ کون مستحق ہوگا (کس کی قسمت میں یہ نعمت ہوگی) آپؐ نے فرمایا ابوہریرہ (رضی اللہ عنہ) میں جانتا تھا کہ تجھ سے پہلے کوئی یہ بات مجھ سے نہیں پوچھے گا،کیونکہ میں دیکھتا ہوں تجھے حدیث سننے کی کتنی حرص ہے (اب سن لے) سب سے زیادہ میری شفاعت کا نصیب ہونا اس شخص کے لئے ہوگا،

جس نے اپنے دل سے یا اپنے جی کے خلوص سے” لا الہ الا اللہ” کہا ہو۔حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ ایک مر تبہ حضرت معاذ ؓ ر سول اﷲ ﷺ کے پیچھے سواری پر سوار تھے آپؐ نے فرمایا اے معاذ! انہوں نے عرض کیا حاضر ہوں یارسول اللہ! آپؐ نے فرمایا اے معاذ! انہوں نے عرض کیا حاضر ہوں یارسول اللہ! ( تین بارآپؐ نے معاذ کو پکارا پھر) فرمایا جو کوئی سچے دل سے یہ گواہی دے کہ اللہ کے سوا کوئی سچا معبود نہیں اور محمد ﷺ اس کے بھیجے ہوئے رسول ہیں تو اللہ اس کو دوزخ پر ح رام کردے گا،

معاذؓ نے عرض کیا یارسول اللہ! کیا میں لوگوں کو اس کی خبر نہ کردوں وہ خوش ہوجائیں آپؐ نے فرمایا ایسا کرے گا توان کو بھروسہ ہوجائے گا اور حضرت معاذ رضی اللہ عنہ نے مرتے وقت گن اہ گارہونے کے ڈر سے یہ لوگوں سے بیان کردیا۔حضرت عثمان رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا جو شخص اس حال میں فوت ہوجائے کہ اسے اس بات کا یقین ہوکہ اللہ جل شانہ کے علاوہ کوئی بھی عبادت کے لائق نہیں تو وہ جنت میں جائے گا۔

Leave a Comment